اشعار بزمِ سخن

بیاضِ تصویر حصہ اول

بیاضِ تصویر حصہ اول

بیاضِ تصویر حصہ اول

[box title=”بیاضِ تصویر حصہ اول” style=”bubbles” box_color=”#0c6c18″ title_color=”#ffffff” radius=”4″]

تری صورت سے نہیں ملتی کسی کی صورت
ہم جہاں میں تری تصویر لیے پھرتے ہیں

[/box]
[box title=”بیاضِ تصویر” style=”bubbles” box_color=”#0c6c18″ title_color=”#ffffff” radius=”4″]

چھپ کے پہروں اسے اور دیکھنے والے بتلا
مجھ میں کیا بات نہیں جو مری تصویرمیں تھی

[/box]
[box title=”بیاضِ تصویر” style=”bubbles” box_color=”#0c6c18″ title_color=”#ffffff” radius=”4″]

ہوا کے دوش پہ تحریر رکھ کے بھول گیا
گئے دنوں کی میں تصویر رکھ کے بھول گیا

[/box]
[box title=”بیاضِ تصویر” style=”bubbles” box_color=”#0c6c18″ title_color=”#ffffff” radius=”4″]

پھر اسی شوخ کی تصویر اتر آئی ہے
مرے اشعار میں مضمر مری رسوائی ہے

[/box]
[box title=”بیاضِ تصویر” style=”bubbles” box_color=”#0c6c18″ title_color=”#ffffff” radius=”4″]

شوق ہر رنگ رقیبِ سرو ساماں نکلا
قیس تصویر کے پردے میں بھی عریاں نکلا

[/box]
[box title=”بیاضِ تصویر حصہ اول” style=”bubbles” box_color=”#0c6c18″ title_color=”#ffffff” radius=”4″]

اور تو دل میں عدمؔ کچھ نہیں پایا جاتا
ایک روتی ہوئی تصویر نظر آتی ہے

[/box]
[box title=”بیاضِ تصویر” style=”bubbles” box_color=”#0c6c18″ title_color=”#ffffff” radius=”4″]

اپنی تصویر دکھاتی ہے مجھے اب دنیا
وہی سنتا ہوں جو اک بار کہا تھا میں نے

[/box]
[box title=”بیاضِ تصویر” style=”bubbles” box_color=”#0c6c18″ title_color=”#ffffff” radius=”4″]

اک پل میں لاکھوں تصویریں، ہر لمحہ اک دنیا
کتنے عالم کھو دیتا ہے آنکھ جھپکنے والا

[/box]
[box title=”بیاضِ تصویر” style=”bubbles” box_color=”#0c6c18″ title_color=”#ffffff” radius=”4″]

رات محفل میں تری ہم کبھی کھڑے تھے چپکے
جیسے تصویر لگا دے کوئی دیوار کے ساتھ

[/box]
[box title=”بیاضِ تصویر” style=”bubbles” box_color=”#0c6c18″ title_color=”#ffffff” radius=”4″]

زلزلہ آیا وہ دل میں وقت کی رفتار سے
خود بخود تصویر تیری گر پڑی دیوار سے

[/box]
[box title=”بیاضِ تصویر” style=”bubbles” box_color=”#0c6c18″ title_color=”#ffffff” radius=”4″]

قبر کے چوکھٹے خالی ہیں، انہیں مت بھولو
جانے کب کونسی تصویر لگا دی جائے

[/box]
[box title=”بیاضِ تصویر” style=”bubbles” box_color=”#0c6c18″ title_color=”#ffffff” radius=”4″]

تصویر زندگی کا عجب آب و رنگ تھا
دیکھا تو پھول ہاتھ لگایا تو سنگ تھا

[/box]
[box title=”بیاضِ تصویر حصہ اول” style=”bubbles” box_color=”#0c6c18″ title_color=”#ffffff” radius=”4″]

نہ کوئی خواب ہمارے ہیں نہ تعبیریں ہیں
ہم تو پانی پہ بنائی ہوئی تصویریں  ہیں

[/box]
[box title=”بیاضِ تصویر” style=”bubbles” box_color=”#0c6c18″ title_color=”#ffffff” radius=”4″]

بادل فضا میں آپ کی تصویر بن گئے
سایہ کوئی خیال سے گزرا تو رو دئیے

[/box]
[box title=”بیاضِ تصویر” style=”bubbles” box_color=”#0c6c18″ title_color=”#ffffff” radius=”4″]

دیوانہ کر گئی تری تصویر کی کشش
چوما جو پاس جا کے تو پیکر میں کچھ نہ تھا

[/box]
[box title=”بیاضِ تصویر” style=”bubbles” box_color=”#0c6c18″ title_color=”#ffffff” radius=”4″]

ٹکڑے ٹکڑے مری تصویر کے کرنے والے
اب مجھے جوڑ! کہ بکھرا ہوا شیرازہ ہوں

[/box]
[box title=”بیاضِ تصویر” style=”bubbles” box_color=”#0c6c18″ title_color=”#ffffff” radius=”4″]

مجھے یہ زعم کہ میں حسن کا مصور ہوں
انہیں یہ ناز کہ تصویر تو ہماری ہے

[/box]
[box title=”بیاضِ تصویر” style=”bubbles” box_color=”#0c6c18″ title_color=”#ffffff” radius=”4″]

دل کے صحرا میں کہاں عالمِ تنہائی ہے
جب بھی دیکھا تری تصویر نظر آئی ہے

[/box]
[box title=”بیاضِ تصویر حصہ اول” style=”bubbles” box_color=”#0c6c18″ title_color=”#ffffff” radius=”4″]

کس نے محرابِ حرم سے تجھے نسبت دے دی
کس نے تصویر بنائی تری انگڑائی کی

[/box]
[box title=”بیاضِ تصویر” style=”bubbles” box_color=”#0c6c18″ title_color=”#ffffff” radius=”4″]

گزری ہے بار بار مرے سر سے موجِ خشک
ابھرا ہوں ڈوب ڈوب کے تصویرِ آب میں

[/box]
[box title=”بیاضِ تصویر” style=”bubbles” box_color=”#0c6c18″ title_color=”#ffffff” radius=”4″]

بڑھا رہی ہیں مرے دکھ نشانیاں تیری
میں تیرے خط تری تصویر تک جلا دونگا

[/box]
[box title=”بیاضِ تصویر” style=”bubbles” box_color=”#0c6c18″ title_color=”#ffffff” radius=”4″]

وہ بولے دیکھ کر تصویرؐ یوسف
سنا جیسا اسے ویسا نہ پایا

[/box]
[box title=”بیاضِ تصویر” style=”bubbles” box_color=”#0c6c18″ title_color=”#ffffff” radius=”4″]

اب حرم گاہوں کی تصویریں کھلی بکتی ہیں
میں نہ کہتا تھاکہ بازاروں کو مہنگا نہ کرو

[/box]
[box title=”بیاضِ تصویر” style=”bubbles” box_color=”#0c6c18″ title_color=”#ffffff” radius=”4″]

اے مصور ترے ہاتھوں کی بلائیں لے لوں
خوب تصویر بنائی مرے بہلانے کو

[/box]
[box title=”بیاضِ تصویر حصہ اول” style=”bubbles” box_color=”#0c6c18″ title_color=”#ffffff” radius=”4″]

زندگی ساری خیال و خواب کی تصویر کر دی
اس نے اظہارِ محبت میں بڑی تاخیر کر دی

[/box]

 

اردو شاعری کی بہترین سائٹ

راقم کے مطعلق

Masood

ایک پردیسی جو پردیس میں رہنے کے باوجود اپنے ملک سے بے پناہ محبت رکھتا ہے، اپنے ملک کی حالت پر سخت نالاں،۔ ایک پردسی جس کا قلم مشکل ترین سچائی لکھنے سے باز نہیں آتا، پردیسی جسکے قلم خونِ جگر کی روشنائی سے لکھتا ہے، یہی وجہ ہے کہ وہ تلخ ہے، ہضم مشکل سے ہوتی ہے، پردسی جو اپنے دل کا اظہار شاعری میں بھی کرتا ہے

اظہار کیجیے

تبصرہ کرنے کے لیے یہاں کلک کیجیے