اشعار بزمِ سخن

بیاضِ وفا حصہ دوم

بیاضِ وفا حصہ دوم

بیاضِ وفاحصہ دوم

[spacer size=”5″]
[box title=”بیاضِ وفا حصہ دوم” style=”noise” box_color=”#59004e” title_color=”#ffffff” radius=”4″]

احسانؔ ایسا تلخ جوابِ وفا ملا
ہم اس کے بعد پھر کوئی ارماں نہ کر سکے

[/box]
[box title=” بیاضِ وفا۔” style=”noise” box_color=”#59004e” title_color=”#ffffff” radius=”4″]

امید تو بندھ جاتی، تسکین تو ہو جاتی
وعدہ نہ وفا کرتے، وعدہ تو کیا ہوتا

[/box]
[box title=”بیاضِ وفا” style=”noise” box_color=”#59004e” title_color=”#ffffff” radius=”4″]

بلا سے کچھ ہو ہم احسانؔ اپنی خو نہ چھوڑیں گے
ہمیشہ بے وفاؤں سے ملیں گے باوفا ہو کر

[/box]
[box title=”بیاضِ وفا” style=”noise” box_color=”#59004e” title_color=”#ffffff” radius=”4″]

یہ دستورِ وفا صدیوں سے رائج ہے زمانے میں
صدائے قرب دی جن کو انہی کو دور دیکھا ہے

[/box]
[box title=”بیاضِ وفا” style=”noise” box_color=”#59004e” title_color=”#ffffff” radius=”4″]

عشق و جنوں کے باب میں چاہیے کارِ رفتگاں
اے مرے جذبۂ وفا جی کا ذرا زیاں تو ہے

[/box]
[box title=”بیاضِ وفا حصہ دوم” style=”noise” box_color=”#59004e” title_color=”#ffffff” radius=”4″]

پابندئ وفا ہے تو پھر مدعا سے کام
مر جائیے کسی کی تمنا نہ کیجیے

[/box]
[box title=”۔بیاضِ وفا” style=”noise” box_color=”#59004e” title_color=”#ffffff” radius=”4″]

پھر بھی تری وفا پہ مجھے اعتبار ہے
جاتا ہوں روز وعدۂ فردا لیے ہوئے

[/box]
[box title=”۔بیاضِ وفا” style=”noise” box_color=”#59004e” title_color=”#ffffff” radius=”4″]

حشر کا کون اعتبار کرے
آپ وعدہ وفا نہیں کرتے

[/box]
[box title=”بیاضِ وفا۔” style=”noise” box_color=”#59004e” title_color=”#ffffff” radius=”4″]

ذوقِ وفا نہیں تمہیں، دادِ وفا تو دو
روتے نہیں جو ساتھ مرے، مسکرا تو دو

[/box]
[box title=”بیاضِ وفا حصہ دوما” style=”noise” box_color=”#59004e” title_color=”#ffffff” radius=”4″]

کیوں برا کہتے ہو تم اپنے جفا کاروں کو
آج تک کوئی نہیں سمجھا وفاداروں کو

[/box]
[box title=”۔بیاضِ وفا” style=”noise” box_color=”#59004e” title_color=”#ffffff” radius=”4″]

کچھ دن کے بعد اس سے جدا ہو گئے منیرؔ
اس بے وفا سے اپنی طبیعت نہیں ملی

[/box]
[box title=”۔بیاضِ وفا” style=”noise” box_color=”#59004e” title_color=”#ffffff” radius=”4″]

نہیں شکوہ مجھے کچھ بے وفائی کا تری ہر گز
گلہ تب ہو اگر تو نے کسی بھی نباھی ہو

[/box]
[box title=”بیاضِ وفا حصہ دوم” style=”noise” box_color=”#59004e” title_color=”#ffffff” radius=”4″]

ہمارے پاؤں میں تو تم نے زنجیرِ وفا ڈالی
تمہارے ہاتھ سے کیوں رشتہء مہروکرم چھوٹا

[/box]
[box title=”بیاضِ وف۔ا” style=”noise” box_color=”#59004e” title_color=”#ffffff” radius=”4″]

ہمیں بھی آ پڑا ہے دوستوں سے کام کچھ یعنی
ہمارے دوستوں کے بے وفا ہونے کا وقت آیا

[/box]

انتخاب و پیشکش: مسعودؔ

اردو شاعری کی بہترین سائٹ

راقم کے مطعلق

Masood

ایک پردیسی جو پردیس میں رہنے کے باوجود اپنے ملک سے بے پناہ محبت رکھتا ہے، اپنے ملک کی حالت پر سخت نالاں،۔ ایک پردسی جس کا قلم مشکل ترین سچائی لکھنے سے باز نہیں آتا، پردیسی جسکے قلم خونِ جگر کی روشنائی سے لکھتا ہے، یہی وجہ ہے کہ وہ تلخ ہے، ہضم مشکل سے ہوتی ہے، پردسی جو اپنے دل کا اظہار شاعری میں بھی کرتا ہے

اظہار کیجیے

تبصرہ کرنے کے لیے یہاں کلک کیجیے