گلدستۂ غزل

یہ صلہ ملا ہے مجھ کو

یہ صلہ ملا ہے مجھ کو
یہ صلہ ملا ہے مجھ کو یہ صلہ ملا ہے مجھ کو یہ صلہ ملا ہے مجھ کو یہ صلہ ملا ہے مجھ کو  یہ صلہ ملا ہے مجھ کو

یہ صلہ ملا ہے مجھ کو تیری دوستی کے پیچھے
کہ ہزاروں غم لگے ہیں میری زندگی کے پیچھے

نہ تو دل کا کوئی مقصد نہ تو میری کوئی منزل
میں چلا ہوں کیوں نجانے کسی اجنبی کے پیچھے

تیرے آستاں سے سر کو میں اٹھاؤنگا نہ ہر گز
میں کہاں کہاں نہ بھٹکا تیری بندگی کے پیچھے

مجھے کہہ کے تم شرابی نہ کرو جہاں میں رسوا
کوئی راز بھی تو ہو گا میری میکشی کے پیچھے

کوئی ان سے جا کے اتنا ذرا اے شکیلؔ کہہ گے
میں ہوا جہاں میں رسوا تیری عاشقی کے پیچھے

شاعر: شکیل بدایونی

تم نے تو مجھ سے کہا تھا کہ مسعود میں تمہاری زندگی کو دائمی خوشیوں سے بھر دونگی !
پر یہ کیا کہ تمہارے پیار میں ، تمہاری دوستی میں مجھے یہ صلہ ملا؟
کہ تمام عمر میری اب آہوں میں، حسرتوں میں، ندامیوں میں، کرب میں گزرنے لگی!
میری مثال تجھ بن اب ایسے ہی ہے جیسے ایک بے منزل راہرو! جسکی کوئی منزل نہ ہو!
جوادھرسے ادھردن بھر بھٹکتا پھرے اور پھر کھڑا سوچے کہ میں کس اجنبی کی تلاش میں ہوں؟
اور جب کبھی مجھے تمہارا نقش پا مل ہی جائے تو میں اسی کو اپنی منزل سمجھ لونگا! میں یہاں سے
کہیں نہیں جاؤنگا کہ میں کہاں کہاں سے بھٹک کر ادھر آیا ہوں!
میری حالت کو لوگ میخوری سمجھ بیٹھے ہیں، کیوں مسعود میاں کو بدنام کرتے ہو؟
میں نے کب پی ہے؟ اور اگر کبھی پی بھی لی ہے تو اسکے پیچھے کیا راز ہے – تم کیا جانو!
اے شکیل! او شکیل! جب کبھی اس سے تیرا سامنا ہوا تو اسے میرا پیغام دیدینا:
میں کہاں کہاں رسوا نہ ہوا اک تیرے دیدار کے لیے!!!

تبصرہ مسعود

اردو شاعری کی بہترین سائٹ

راقم کے مطعلق

Masood

ایک پردیسی جو پردیس میں رہنے کے باوجود اپنے ملک سے بے پناہ محبت رکھتا ہے، اپنے ملک کی حالت پر سخت نالاں،۔ ایک پردسی جس کا قلم مشکل ترین سچائی لکھنے سے باز نہیں آتا، پردیسی جسکے قلم خونِ جگر کی روشنائی سے لکھتا ہے، یہی وجہ ہے کہ وہ تلخ ہے، ہضم مشکل سے ہوتی ہے، پردسی جو اپنے دل کا اظہار شاعری میں بھی کرتا ہے

اظہار کیجیے

تبصرہ کرنے کے لیے یہاں کلک کیجیے