متفرقات

کچھ عشق تھا، کچھ مجبوری تھی

کچھ عشق تھا، کچھ مجبوری تھی

کچھ عشق تھا، کچھ مجبوری تھی، سو میں نے جیون وار دیا
میں کیسا زندہ آدمی تھا اِک شخص نے مجھ کو مار دیا
یہ سجا سجایا گھر ساقی میری ذات نہیں میرا حال نہیں
اے کاش کبھی تم جان سکو جو اُس سکھ نے آزار دیا
میں کھلی ہوئی اِک سچائی مجھے جاننے والے جانتے ہیں
میں نے کن لوگوں سے نفرت کی اور کن لوگوں سے پیار کیا
وہ عشق بہت مشکل تھا مگر آسان نہ تھا یوں جینا بھی
اُس عشق نے زندہ رہنے کا مجھے ظرف دیا پندار دیا
میں روتا ہوں اور آسمان سے تارے ٹوٹتے دیکھتا ہوں
اُن لوگوں پر جن لوگوں نے میرے لوگوں کو آزار دیا
وہ یار ہوں یا محبوب میرے یا کبھی کبھی ملنے والے
اِک لذت سب کے ملنے میں وہ زخم دیا یا پیار دیا

شاعر:عبیداللہ علیم
ایک جانب عشق تھا اور ایک جانب مجبوری مجھے آخر کار اپنے جیون کو بانٹنا ہی پڑا۔ جب عشق کی مرادیں پوری نہ ہوئی ہوں اور زندگی کہیں سے کہیں لے جائے تو ایسا ہی تو کرنا پڑتا ہے! تم نے بھی تو ایسا ہی کیا ہے! کیسا عشق تھا ہمارا! کیسا جنون تھا! مگر آخر کار ہمیں اپنا اپنا جیون یہاں وہاں بانٹنا ہی پڑا۔ یاد ہے لوگ مجھے کیا زندہ دل انسان کی طرح جانتے تھے۔ محفل کی رونق! محفل کی جان!  مگر تم نے میرے مزاج کو ایسا بدمزہ کیا کہ میں ایک مردہ دل انسان بن کر رہ گیا!
تم یہ جو دیکھ رہے ہو کہ میں ایک ہشاش بشاش خوش و خرم گھر میں رہتا ہوں ، یہ میری شریکِ سفر، یہ میرے بچے، یہ میری رونقیں – مگر نہیں یہ میرے ذات نہیں! یہ میں نہیں یا یہ میں وہ نہیں، یہ میں یہ ہوں! ایک مردہ دل انسان! یہ میری ذات سے بہت دور ہے! جومیری اداسیوں کی داستان نہیں بیان کر سکتا! مگر تم نہیں سمجھو گے! تم میرے روشن گھربار کو دیکھکر میرے دل کے زخموں کا اھاطہ نہیں کرسکتے کہ یہ سکھ ہے کہ آزار!
میری محبت بہتے ہوئے پانی کی طرح شفاف تھی اور ہے! ساری دنیا جانتی ہے کہ میں نے کس سے محبت کی ہے! اورکون ہے جو میری نفرت سے ہوکر گزرا ہے! میں ایک کھلی کتاب کی طرح سب پر روشن ہوں، کھلے کھلے اوراق، جو چاہے پڑھ لے، میں کوئی مشکل سبق نہیں اور نہ ہی کوئی فلسفہ ہوں جو سمجھ نہ آ سکے۔ میری خوشحالی سے یہ نہ سمجھ لینا کہ میرے لیے یوں جینا آسان ہے، ہرگز نہیں بلکہ یہ بھی اس عشق کی طرح کٹھن! مشکل! مگر اتنا ضرور ہے کہ اس عشق نے مجھے زندگی جینے کا ظرف عطا کر دیا! مجھے فکرِ حال و موجود کا ظرف دیا ہے!
میرے دل کا کرب جب آنسو بن کر بہتا ہے تو میں دیکھتا ہوں کہ آسمان سے عذاب ان لوگوں پر برس رہا ہے جن لوگوں نے میرے لوگوں کو دکھ تکلیف دی! میرے لوگ! ان میں کچھ اپنے تھے کچھ بیگانے اور کچھ تو کبھی کبھی ملتے تھے۔۔۔ مگر ہر کسی کے ملنے میں ایک عجیب طرح کے زخم کی لذت تھی! ایک ایسی لذت جو کسی دوسری بات میں نہیں تھی۔ یہ بات صرف ہم ہی سمجھ سکتے ہیں!

تبصرہ مسعود

کچھ عشق تھا، کچھ مجبوری تھی کچھ عشق تھا، کچھ مجبوری تھی کچھ عشق تھا، کچھ مجبوری تھی کچھ عشق تھا، کچھ مجبوری تھی کچھ عشق تھا، کچھ مجبوری تھی کچھ عشق تھا، کچھ مجبوری تھی

اردو شاعری کی بہترین سائٹ

راقم کے مطعلق

Masood

ایک پردیسی جو پردیس میں رہنے کے باوجود اپنے ملک سے بے پناہ محبت رکھتا ہے، اپنے ملک کی حالت پر سخت نالاں،۔ ایک پردسی جس کا قلم مشکل ترین سچائی لکھنے سے باز نہیں آتا، پردیسی جسکے قلم خونِ جگر کی روشنائی سے لکھتا ہے، یہی وجہ ہے کہ وہ تلخ ہے، ہضم مشکل سے ہوتی ہے، پردسی جو اپنے دل کا اظہار شاعری میں بھی کرتا ہے

اظہار کیجیے

تبصرہ کرنے کے لیے یہاں کلک کیجیے